وُضو میں مکروہات

وُضو میں مکروہات

0
356

بِسْمِ اللّٰہِ الرَّحْمٰنِ الرَّحِیۡمِ

مکروہ چیزیں وہ ہوتی ہیں جو شریعت میں ناپسند ہیں جن سے ثواب میں کمی آ جاتی ہے اور کچھ جگہوں پر تو عبادت اسکی وجہ سے ناقص یا ادھوری رہ جاتی ہے اور انکا کرنے والا گناہ گار ہو جاتا ہے انکا بہت دھیان رکھنا چاہئیے۔ ہر سنت کا چھوڑنا مکروہ ہے ایسے ہی ہر مکروہ کا چھوڑنا سنت ہے۔

وضو کی کچھ مکروہ باتیں یہ ہیں۔

  • (۱) عورت کے غسل یا وُضو کے بچے ہوئے پانی سے وُضو کرنا۔
  • (۲) وُضو کے لیے نجس جگہ بیٹھنا۔
  • (۳) نجس جگہ وُضو کا پانی گرانا۔
  • (۴) مسجد کے اندر وُضو کرنا۔
  • (۵) اعضائے وُضو سے لوٹے وغیرہ میں قطرہ ٹپکانا۔
  • (۶) پانی میں رینٹھ یا کھنکار ڈالنا۔
  • (۷) قبلہ کی طرف تھوک یا کھنکار ڈالنا یا کُلّی کرنا۔
  •   (۸) بے ضرورت دنیا کی بات کرنا۔
  • (۹) زیادہ پانی خرچ کرنا۔
  • (۱۰) اتنا کم خرچ کرنا کہ سنت ادا نہ ہو۔
  • (۱۱) مونھ پر پانی مارنا ۔ یا
  • (۱۲) مونھ پر پانی ڈالتے وقت پھونکنا۔
  • (۱۳) ایک ہاتھ سے مونھ دھونا کہ رِفاض و ہنود کا شعار ہے۔
  • (۱۴) گلے کا مسح کرنا۔
  • (۱۵) بائیں ہاتھ سے کُلّی کرنا یا ناک میں پانی ڈالنا۔
  • (۱۶) داہنے ہاتھ سے ناک صاف کرنا۔
  • (۱۷) اپنے لیے کوئی لوٹا وغیرہ خاص کر لینا۔
  • (۱۸) تین جدید پانیوں سے تین بار سر کا مسح کرنا۔
  • (۱۹) جس کپڑے سے استنجے کا پانی خشک کیا ہو اس سے اعضائے وُضو پونچھنا۔
  • (۲۰) دھوپ کے گرم پانی سے وُضو کرنا۔
  • (۲۱) ہونٹ یا آنکھیں زور سے بند کرنا اور اگر کچھ سوکھا رہ جائے تو وُضو ہی نہ ہو گا۔

ہر سنت کا ترک مکروہ ہے۔ یوہیں ہر مکروہ کا ترک سنت۔

NO COMMENTS